کس نے روکا ہے

نیندِ غفلت میں

ہم جو سوئے ہیں

آبادی ہے پر

برباد ہوئے ہیں

اس ڈگر سے بھی

رستا جاتا ہے

ہے لیا ان نے

جن کے ہوئے ہیں تو

اپنے تم وقت کو

ایسے کاموں کو دو

مسلے سب حل کرو

کس نے روکا ہے؟

ڈگری ہی سب کا

کارناما ہے

ہم نے ایسے کیا

سر اٹھانا ہے

نوکری سب کی

خوش خیالی ہے

نوکری دینے کی

کرسی خالی ہے، تو

اپنے تم وقت کو

ایسے کاموں کو دو

مسلے سب حل کرو

 کس نے روکا ہے؟

In the sleep of neglect

We are asleep

We are populated

But are in ruins

From these crossroads too

Goes a way

Taken by those

To whom we belong so

Give your time

To such endeavors

That solve all problems

Who is stopping you?

Mere degrees are everyone’s

Supposed feat

Is this how we

Will raise our heads

Employment is everyone’s

Optimistic dream

But employer’s seat

Is vacant

Give your time

To such endeavors

That solve all problems

Who is stopping you?

Leave a Reply